سرکاری گاڑی ججز کو لےکر جارہی تھی ،حیات آباد میں سابق ایم پی اے عدنان وزیر کی رہائشگاہ کے قریب موٹرسائیکل پر سوار حملہ آور نے دھماکہ کردیا،ڈرائیور موقع پر ہی جاں بحق،زخمی ہونےوالوں میں 3خواتین ججز بھی شامل،ہسپتال منتقل غلنئی میں بمباروں کی پولیٹیکل ہیڈ کوارٹر میں گھسنے کی کو شش ناکام،روکنے پر ایک نے خود کو اڑا لیادوسرے نے فائرنگ شروع کردی،جوابی کارروائی میںمارا گیا،دھماکے میں 6افراد جان کی بازی ہار گئے،صدر،وزیراعظم ودیگر کااظہار افسوس


پشاورٟبیورورپورٹٞماتحت عدلیہ کے ججز کو لے جانےوالی گاڑی پر خودکش حملہ ، ڈرائیور جاں بحق ، متعددججززخمی جبکہ جوابی کارروائی میں 5دہشتگردہلاک، تفصیلات کے مطابق پشاور کے علاقے حیات آباد میں پی ڈی اے کے دفتر کے قریب سابق رکن صوبائی اسمبلی عدنان وزیر کے گھر کے سامنے ججز کی گاڑی پر خودکش حملے میں ڈرائیور جاں بحق ،متعدد ججز زخمی ہوگئے زخمیوں کو فوری طور پر حیات آباد میڈیکل کمپلیکس منتقل کیا گیاایس ایس پی آپریشنز سجاد خان کا کہنا ہے خود کش آور حملہ آور موٹر سائیکل پر سوار تھا اور اس نے ماتحت عدلیہ کے ججز کو لے جانےوالی گاڑی کو نشانہ بنایا گاڑی میں خواتین ججز بھی موجود تھیں، دھماکے میں گاڑی کا ڈرائیور موقع پر ہی جاں بحق ہوگیا، زخمی ججز کی شناخت ڈسٹرکٹ جج آصف جدون ، خواتین سول جج آمنہ، تحریم اور رابعہ کے نام سے ہوئی آصف جدون، آمنہ اور تحریمہ کو حیات آباد میڈیکل کمپلیکس ،رابعہ عباسی کو رحمن میڈیکل انسٹیٹیوٹ میں طبی امداد فراہم کی جارہی ہے واقعے کے بعد سکیورٹی فورسز ، پولیس اہلکاروں کی بھاری نفری نے علاقے کو گھیرے میں لےکر شواہد اکٹھے کرکے تحقیقات شروع کردیں دھماکے کی جگہ پر میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے تحریک انصاف کے رہنما شوکت یوسفزئی نے کہاخیبر پختونخوا ،فاٹا میں پورے پاکستان کی جنگ لڑ رہے ہیں دہشتگرد آسان اہداف کو نشانہ بنا کر اپنی موجودگی ظاہر کررہے ہیں خودکش حملہ آور کے سر سمیت دیگر اعضا ئ مل گئے ،شناخت کرنے کی کوشش کی جائےگی وزیرداخلہ چودھری نثار نے حیات آباد دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے رپورٹ طلب کرلی دوسری جانب مہمند ایجنسی کی تحصیل غلنئی میں 2 خود کش بمباروں کی پولیٹیکل ہیڈ کوارٹر میں گھسنے کی کوشش ناکام بنادی گئی ،کارروائی کے دوران ایک خود کش حملہ آور نے خود کو دھماکہ خیز مواد سے اڑا دیا جس کے نتیجے میں لیویز کے 3اہلکاروں سمیت 6افراد جاں بحق ،3زخمی ہو گئے،دوسرے دہشتگرد کو فورسز نے فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا،حملہ آوروں کے جسمانی اعضائ ،زیر استعمال موٹر سائیکل و دیگر شواہد اکٹھے کر لئے گئے پولیٹیکل انتظامیہ کے ذرائع کے مطابق مہمند ایجنسی کی تحصیل غلنئی میں 2خودکش حملہ آوروں نے پولیٹیکل ایڈمنسٹریشن کی رہائشی کالونی میں داخل ہونے کی کوشش کی تاہم لیویز فورس نے حملہ آوروں کو اندر جانے سے روکا جس پر ایک حملہ آور نے مرکزی گیٹ کے قریب اپنے آپ کو اڑا لیا جبکہ دوسرے حملہ آور کو سکیورٹی فورسز نے ہلاک کردیادھماکے کے نتیجے میں3لیویز اہلکاروں سمیت 6افراد جاں بحق ، 3زخمی ہو گئے زخمی اہلکاروں کو طبی امداد کےلئے ہسپتال منتقل کردیا گیابعدازاں پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہٟآئی ایس پی آرٞکی جانب سے جاری ہونےوالے بیان میں کہا گیا ہے مہمند ایجنسی میں دہشتگردی کی کوشش ناکام بنادی ،آئی ایس پی آر کے مطابق سکیورٹی ایجنسیز کو افغانستان سے خود کش بمباروں کی مہمند ایجنسی میں داخلے کی رپورٹس ملی تھیںبیان میں کہا گیا ہے موٹرسائیکل پرآنےوالے 2افراد نے پولیٹیکل ہیڈ کوارٹرمیں داخل ہونے کی کوشش کی تولیویزاہلکاروں نے رکنے کا حکم دیا جس پرایک نے خود کو وہیں بارودی مواد سے اڑا دیا دوسرے نے فائرنگ شروع کردی، جوابی کارروائی میں دوسرا دہشتگرد بھی ہلاک کردیا گیادھماکے کے بعد پولیٹیکل ہیڈ کوارٹرکا مرکزی دروازہ عام افراد کی آمدورفت کےلئے بند کردیا گیاجبکہ وزیر اعظم نواز شریف نے خود کش حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرکے وفاقی وزیر داخلہ سے رپورٹ طلب کر لی ،چودھری نثار نے گہرے دکھ و افسوس کا اظہار کرتے ہوئے تحقیقات کا حکم دےدیا خود کش حملے میں انسانی جانوں کے ضیاع پر صدر ممنون حسین ،اقبال جھگڑا،تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان،اے این پی کے سربراہ اسفند یار ولی و دیگر رہنماؤں نے بھی شدید مذمت کی ہے ۔ خودکش حملے